palaces of the world's most powerful leaders and their startling secrets

اس محل میں 40 یا 50 باتھ روم نہیں بلکہ– دنیا کے طاقتور سربراہان کے شاندار محل اور ان کے چونکا دینے والے راز

حالیہ دور میں کئی ممالک کے سربراہان نے شاندار اور پرشکوہ محلات تعمیر کروائے ہیں۔ اس کی ایک تازہ مثال روس کے صدر ولادمیر پوٹن کا بحیرہ اسود کے ساحل پر تعمیر کیا جانے والا عالیشان محل ہے۔ صدر پوٹن کا محلاس کا انکشاف روسی اپوزیشن رہنما الیکسی ناوالنی نے ایک ویڈیو پوسٹ میں کیا جو وائرل ہو گئی۔ اس ویڈیو کو نوے ملین سے زائد دفعہ یو ٹیوب پر دیکھا جا چکا ہے۔ بحیرہ اسود کے کنارے پر تعمیر کیے گئے اس محل کی قیمت ایک ارب یورو سے زیادہ ہے۔ ناوالنی کے مطابق یہ محل مناکو کے شہزادے کے محل سے بھی 40 گنا بڑا ہے۔ روسی حکومت کا کہنا ہے کہ یہ محل کئی کاروباری حضرات کی مشترکہ ملکیت ہے جن کے نام افشا کرنا ممکن نہیں۔

اس محل میں 40 یا 50 باتھ روم نہیں بلکہ-- دنیا کے طاقتور سربراہان کے شاندار محل اور ان کے چونکا دینے والے راز 1

 مراکش کا شاہی محلیہ مراکش کے بادشاہ محمد ششم کے دس بارہ محلات میں سے ایک محل ہے۔ کرپشن پر کی کتاب ’کنگ آف تھیوز‘ (چوروں کا بادشاہ) کے مطابق ان محلوں کا روزانہ خرچ لگ بھگ بارہ لاکھ یورو ہے۔ یہ محل انیسویں صدی میں تعمیر کیا گیا تھا اور اس میں بادشاہ کے بچوں کے لیے ایک الگ اسکول ہے۔

اس محل میں 40 یا 50 باتھ روم نہیں بلکہ-- دنیا کے طاقتور سربراہان کے شاندار محل اور ان کے چونکا دینے والے راز 2

 اردوآن کا محلصدر رجب طیب اردوآن نے پندرہ ملین یورو سے یہ ایک مضبوط اور عالیشان محل تعمیر کرایا۔ یہ محل ’ون لیک‘ کے شمال میں بنایا گیا ہے۔ اس کا طرز تعمیر قدیمی قطب آباد محل جیسا ہے۔ یہ محل سلجوک حکمران سلطان علی الدین نے تیرہویں صدی میں تعمیر کروایا تھا۔ محل کی تعمیر پرعدالتی پابندی تھی جسے ترک صدر نے خارج کرکے اپنے لیے یہ تیسرا پرآسائش محل بنوایا۔

اس محل میں 40 یا 50 باتھ روم نہیں بلکہ-- دنیا کے طاقتور سربراہان کے شاندار محل اور ان کے چونکا دینے والے راز 3

 دنیا کا سب سے بڑا محلبرونائی کے دارالحکومت سری بھگوان میں دنیا کا سب سے بڑا محل واقع ہے۔ اس کی تعمیر سن 1984 میں مکمل ہوئی۔ سلطان حسن البلقیہ کا یہ محل دو لاکھ مربع میٹر پر محیط ہے۔ اس میں ایک ہزار آٹھ سو کمرے، ڈھائی سو باتھ روم اور اوپر نیچے جانے کے لیے سترہ لفٹیں ہیں۔ اس محل کی لاگت ایک ارب ڈالر سے زیادہ ہے۔

اس محل میں 40 یا 50 باتھ روم نہیں بلکہ-- دنیا کے طاقتور سربراہان کے شاندار محل اور ان کے چونکا دینے والے راز 4

 راشٹر پتی بھون، نئی دہلیبھارت کے صدر کی رہائش گاہ کی تعمیر سترہ برس میں مکمل ہوئی تھی۔ سن 1950 سے یہ بھارت کے صدر کی رہائش گاہ یا راشترپتی بھون کہلاتی ہے۔ اس میں تین سو چالیس کمرے اور کئی ہال ہیں۔ اس کے کوریڈورز کی مجموعی لمبائی ڈھائی کلو میٹر بنتی ہے۔ اس سے ملحقہ مغل باغ اتنا بڑا ہے کہ اس میں ایک سو فُٹ بال گراؤنڈز سما سکتے ہیں۔

اس محل میں 40 یا 50 باتھ روم نہیں بلکہ-- دنیا کے طاقتور سربراہان کے شاندار محل اور ان کے چونکا دینے والے راز 5

 ابو ظہبی کا الوطن محلالوطن محل باغات میں گِھرا ہوا ہے اور اپنے سفید گنبدوں کی وجہ سے انتہائی پرشکوہ دکھائی دیتا ہے۔ اس کا کل رقبہ تین لاکھ ستر ہزار مربع میٹر ہے۔ سنگ مرمر کی دیواریں اور سونے کے منقش دروازے اس کا حسن دوبالا کرتے ہیں۔ اس محل میں متحدہ عرب امارات کے حکمران اور ولی عہد کے علاوہ کابینہ کے ارکان کی رہائش گاہیں ہیں۔

اس محل میں 40 یا 50 باتھ روم نہیں بلکہ-- دنیا کے طاقتور سربراہان کے شاندار محل اور ان کے چونکا دینے والے راز 6

 تاجک صدارتی محلوسطی ایشیائی ریاست تاجکستان کا صدارتی محل ایک قومی نشان اور سفید ہونے کی وجہ سے ’وائٹ ہاؤس‘ کہلاتا ہے۔ اس محل کے گراؤنڈ میں دنیا کی دوسری بلند ترین فائبر گلاس کی چھت ہے، جو کہ ایک سو پینسٹھ میٹر بلند ہے۔

اس محل میں 40 یا 50 باتھ روم نہیں بلکہ-- دنیا کے طاقتور سربراہان کے شاندار محل اور ان کے چونکا دینے والے راز 7

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں