مریم اور نواز شریف سے متعلق ثاقب نثار کی مبینہ آڈیو کا فارنزک کرنیوالی کمپنی کو دھمکیاں ملنے کا انکشاف 1

مریم اور نواز شریف سے متعلق ثاقب نثار کی مبینہ آڈیو کا فارنزک کرنیوالی کمپنی کو دھمکیاں ملنے کا انکشاف

سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی مبینہ آڈیو کلپ کا فارنزک تجزیہ کرنے والی امریکی فرم گیرٹ ڈسکوری نے دعویٰ کیا ہے کہ اُسے اس کام کی وجہ سے دھمکی آمیز فون کال موصول ہوئی ہے تاہم یہ نہیں بتایا گیا کہ کال کہاں سے کی گئی۔

ٹوئٹر پیغام میں گیرٹ ڈسکوری نے کہا کہ دھمکی آمیز کال میں کہا گیا کہ ہماری زندگیاں خطرے میں ہیں اور اُسی شخص نے آڈیو کلپ کی تصدیق کرنے پر ہمیں عدالت میں لے جانے کی دھمکی بھی دی۔

کمپنی کا کہنا ہے کہ اُن کی ٹیم کو فارنزک نتیجہ بدلنے پر مجبور کرنا غیر اخلاقی ہے۔ سابق چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے آڈیو کلپ کو من گھڑت قرار دیا ہے۔

ایک نامور پاکستانی میڈیا گروپ کے مطابق گیرٹ ڈسکوری نے اُنہیں کہا ہے کہ جس ویب سائٹ فیکٹ فوکس کے ساتھ آڈیو کلپ کی تصدیق کا معاہدہ ہوا ہے اگر وہ اجازت دے گی تب ہی فارنزک تفصیلات منظر عام پر لائی جا سکتی ہیں۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق فیکٹ فوکس ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ یہ دو لوگوں کے درمیان ہوئی بات چیت کی حقیقی آڈیو ٹیپ ہے لیکن فارنزک اُس ٹیپ کا کرایا گیا ہے، اُن دو آوازوں کا نہیں۔

مبینہ آڈیو ٹیپ کا معاملہ کیا ہے؟
گزشتہ دنوں سابق چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ریٹائرڈ ثاقب نثار سے منسوب ایک مبینہ آڈیو ٹیپ سامنے آئی تھی جس میں وہ کہہ رہے ہیں کہ عمران خان کی جگہ بنانےکیلئے نواز شریف کو سزا دینی ہوگی۔

مبینہ آڈیو کلپ میں وہ مبینہ طور پر تسلیم کر رہے ہیں کہ مریم نواز کو بھی سزا دینی ہو گی اگرچہ مریم نواز کے خلاف کوئی کیس نہیں ہے۔

دوسری جانب جیو نیوز سے گفتگو میں سابق چیف جسٹس ثاقب نثار نے خود سے منسوب مبینہ آڈیو ٹیپ کی تردیدکی۔

ان کا کہنا تھاکہ آڈیو میں آواز میری نہیں ہے، مجھ سے منسوب کی گئی آڈیو جعلی ہے،کبھی کسی کو اس حوالے سے کوئی ہدایات نہیں دیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں