پیپلزپارٹی نے جعلی ویڈیو بنا کر ہمارے خلاف مہم چلانےکی کوشش کی، رہنما ن لیگ کا الزام 1

پیپلزپارٹی نے جعلی ویڈیو بنا کر ہمارے خلاف مہم چلانےکی کوشش کی، رہنما ن لیگ کا الزام

مسلم لیگ ن کے رہنما علی پرویز ملک نے الزام لگایا ہےکہ پیپلزپارٹی نے جعلی ویڈیو بنا کر ہمارے خلاف مہم چلانے کی کوشش کی ہے۔

ایک بیان میں علی پرویز ملک کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی کی جانب سے حلقے میں ووٹوں کی خرید وفروخت کی مذمت کرتے ہیں، امید ہےکہ پیپلز پارٹی کی قیادت اس مکروہ دھندے کا نوٹس لےگی،این اے 133کے عوام نے ان کی جھوٹی مہم کو مسترد کردیا ہے۔

علی پرویز ملک کا کہنا ہے کہ 2018میں ن لیگ نے اس حلقے سے 90 ہزار ووٹ لیے تھے، اس الیکشن میں پیپلز پارٹی کا ہمارے ووٹوں کادسواں حصہ بھی نہیں تھا۔
خیال رہے کہ قومی اسمبلی کی نشست این اے 133 لاہور پر ضمنی انتخاب 5 دسمبرکو ہونا ہے، یہ نشست مسلم لیگ ن کے ایم این اے پرویز ملک کے انتقال کے باعث خالی ہوئی تھی۔

ضمنی الیکشن سے قبل سیاسی جماعتوں کی جانب سے ووٹرز سے قرآن پاک پر حلف لیکر ووٹ خریدنے کے الزامات سامنے آئے ہیں۔

مسلم لیگ ن کے کارکن محمد عارف نے الیکشن کمیشن کو تحریری شکایت درج کرائی ہے جس میں کہا گیا ہےکہ پیپلزپارٹی والے حلقے میں ووٹوں کی خریداری کر رہے ہیں۔محمد عارف کی جانب سے جمع کرائی گئی درخواست میں کہا گیا ہے کہ پیپلز پارٹی کے امیدوار حلف لےکر ووٹر کو 2 ہزار روپے دے رہے ہیں۔

سیکرٹری انفارمیشن پیپلز پارٹی پنجاب شہزاد چیمہ کا اس حوالے سے کہنا ہےکہ ایسی ویڈیوز سوشل میڈیا پر گردش کر رہی ہیں، ایسی ویڈیوز دونوں جماعتوں کی طرف سے وائرل ہو رہی ہیں۔


شہزاد چیمہ نے کہا کہ پارٹی نے کسی کو نہیں کہا کہ کسی کو پیسے دیں، یہ ہتھکنڈے الیکشن خراب کرنے کے لیے ہیں، اگر کسی سطح پر یہ ہوا ہے تو پیپلزپارٹی اس کی شدید مذمت کرتی ہے۔

الیکشن کمیشن نے لاہور کے حلقہ این اے 133 میں ضمنی الیکشن سے قبل مبینہ طور پر ووٹ خریدنے سے متعلق ویڈیو کانوٹس لے لیا ہے اور ڈپٹی کمشنر لاہور اور آئی جی پنجاب پولیس کو مراسلہ بھیج کر 30 نومبر تک رپورٹ طلب کرلی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں