بلدیاتی اداروں کی بحالی کیس: چیف سیکرٹری کو نوٹس جاری 1

بلدیاتی اداروں کی بحالی کیس: چیف سیکرٹری کو نوٹس جاری

یب ڈیسک : سپریم کورٹ میں بلدیاتی اداروں کی بحالی کےکیس کی سماعت،چیف جسٹس کا سیکرٹری لوکل گورنمنٹ پنجاب پر اظہار برہمی۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں بلدیاتی اداروں کی بحالی کےکیس کی سماعت ہوئی ،سیکرٹری لوکل گورنمنٹ نورالامین مینگل سپریم کورٹ میں پیش ہوئے۔وکیل بلدیاتی نمائندگان نے عدالت کو آگاہ کیا کہ عدالتی حکم کے باوجودبلدیاتی ادارےبحال نہیں ہوئے،چیف جسٹس گلزار احمد نے استفسار کیا کہ سیکرٹری بلدیات بتائیں ابتک کیاکاروائی کی گئی؟ جس پر سیکرٹری بلدیات کا کہنا تھا کہ توہین عدالت کی درخواست پرجواب کیلئےمہلت دی جائے

چیف جسٹس گلزار احمد نے سیکرٹری لوکل گورنمنٹ پنجاب پر اظہار برہمی کرتے ہوئے ریمارکس دیئے سیکرٹری لوکل گورنمنٹ ہیں،آپ کو کچھ معلوم ہی نہیں، کیا عدالت تفریح کرنے آئے ہیں؟ عدالت سے سیدھا جیل بھیج دیں گے، کس قسم کا سیکرٹری ہےمعلوم نہیں کیا ذمہ داری ہے،چیف جسٹس نے استفسار کیاکہ عدالت نے بلدیاتی اداروں کی بحالی کا حکم کب دیا تھا؟ جس پر وکیل درخواست گزار نے بتایا کہ 25مارچ کوبلدیاتی اداروں کی بحالی کا حکم دیا تھا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ دسمبر تک بلدیاتی حکومتوں کی معیاد ختم ہو جائے گی، لگتا ہے حکومت اختیارات دیئے بغیراداروں کوختم کرناچاہتی ہے، منتخب بلدیاتی نمائندوں نے ابتک کیا کام کیا ہے، لاہور کے مئیر صاحب کہاں ہیں

مئیر لاہور مبشر جاوید سپریم کورٹ میں پیش ہوئےآگاہ کیا کہ عدالتی حکم کے مطابق سڑک پر بیٹھ کر اجلاس بلائے، بلدیاتی نمائندوں کے اجلاس اور کام کو میڈیا پر دکھایا گیا، مبشرجاوید کا کہنا تھا کہ سہولت کاری کیلئے حکومت کی جانب سے کچھ نہیں کیا جا رہا،چیف جسٹس کا مئیر لاہور سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا آپ کے لوگ خود ہی کام کرنا نہیں چاہتے، دنیا میں جا کر دیکھیں بلدیاتی ادارے کیسے کام کرتے ہیں، آپ کو کام کرنا ہوتا تو سڑکوں پر بھی بیٹھ کر کر لیتے، ملک بھر کے بلدیاتی ادارے حکم کے بعد بحال ہو گئے تھے، شاید بلدیاتی نمائندے من و سلوی کا انتظار کر رہے ہیں، میئر لاہور نے عدالت کو بتایا کہ ہمارے پاس ایک صفائی والا تک نہیں کام کیسے کریں؟ جب ذمہ داریوں کا معلوم ہی نہیں تو گھر بیٹھ جائیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں