approval not to allow PDM

صوبائی انٹیلی جنس کمیٹی کا اجلاس، پی ڈی ایم کو جلسے کی اجازت نہ دینے کی منظوری

صوبائی انٹیلی جنس کمیٹی کا اہم اجلاس۔ پی ڈی ایم کو 13دسمبر کو مینار پاکستان میں جلسے کی اجازت نہ دینے کی منظوری۔ خلاف ورزی پر گرفتاریاں ہونگی اور مقدمات درج ہونگے۔ دوسری جانب وفاقی حکومت کی جانب سے محکمہ داخلہ پنجاب کو 13 دسمبر کے جلسے بارے تھریٹ لیٹر جاری کر دیا گیا۔

13دسمبر کو مینار پاکستان پر پی ڈی ایم کے جلسے سے متعلق صوبائی انٹیلی جنس کمیٹی کا اہم اجلاس ہوا۔ وزیر قانون پنجاب  راجہ بشارت، ایڈیشنل چیف سیکرٹری داخلہ مومن آغا اور  دیگر انٹیلی جنس اداروں کے افسران نے شرکت کی۔

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ کورونا کے بڑھتے کیسز کے  باعث جلسے کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔ خلاف ورزی پر پی ڈی ایم کے رہنماؤں کے خلاف  مقدمات درج کرنے کی منظوری دی گئی۔

یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ مینار پاکستان کو جانے والے راستے بند نہیں کئے جائیں گے۔ بہت ضروری ہو تو صرف  2 مقامات پر کنٹینرز کھڑے کئے جا سکتے ہیں۔

دوسری جانب وفاقی حکومت کی جانب سے محکمہ داخلہ پنجاب کو 13 دسمبر کے جلسے بارے تھریٹ لیٹر جاری کر دیا گیا۔ لیٹر میں کہا گیا ہےکہ پشاور میں دہشت گردوں کی ناکام کارروائی کے بعد  وہ لاہور میں  پی ڈی ایم کے سینئر رہنماؤں کوٹارگٹ کرسکتے ہیں۔

محکمہ داخلہ پنجاب نے بریفنگ دی کہ تمام تر صورتحال کے پیش نظر پنجاب حکومت کسی صورت جلسہ کی  اجازت نہیں دے سکتی۔

صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت کا کہنا ہے کہ  جو جلسے اور ریلیوں کے شرکاء کو سہولیات دیں گے ان کے خلاف بھی کارروائی ہوگی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں