Gastric cancer

معدے کا کینسر، ان علامات کو نظر انداز نہ کریں ورنہ نقصان ہوسکتا ہے

معدے کا کینسر، کینسر کی سب سے خطرناک اقسام میں سے ایک ہے- سب سے خطرناک بات یہ ہے کہ اس بیماری کی علامات آغاز کے بجائے آخری اسٹیج پر ظاہر ہوتی ہیں- شروع میں ظاہر ہونے والی علامات عام طور پر معمولی نوعیت کی ہوتی ہیں جس کی وجہ سے نظر انداز کر دی جاتی ہیں- یورپ میں ہر 100 مردوں میں سے 1 سے 2 مردوں اور ہر 100 خواتین میں سے 1 خواتین کو یہ کینسر ضرور لاحق ہوتا ہے- اس کینسر کی علامات کے بارے میں آگہی ہونا بہت ضروری ہے

معدے کا کینسر ایک نایاب بیماری ہے اور اسے اکثر ابتدائی طور پر نظر انداز کیا جاتا ہے۔ معدے یا پیٹ کے مسائل کی شناخت مشکل ہوتی ہے اور ان کا تعلق بہت سی مختلف چیزوں سے ہوتا ہے۔ جب کوئی مریض معدے سے متعلق شکایات کے ساتھ ڈاکٹر سے رجوع کرتا ہے تو، پیٹ کا کینسر ذہن میں آنے والی پہلی چیز نہیں ہے۔ خوش قسمتی سے، اس بیماری کا علاج کرنا آسان ہے، خاص طور پر جب یہ ابتدائی مرحلے میں دریافت ہو

معدے کے کینسر کی وجوہات

معدے کے کینسر کی کئی وجوہات ہیں اور ان چیزوں سے بچ کر ہم اس کینسر سے محفوظ بھی رہ سکتے ہیں- معدے کے کینسر کی وجوہات میں شامل ہیں:

معدے کا کینسر، ان علامات کو نظر انداز نہ کریں ورنہ نقصان ہوسکتا ہے 1

موٹاپا

بہت زیادہ نمکین غذا کا استعمال

خوراک میں پھل اور سبزیوں کا کم استعمال

خاندان میں کسی کو یہ کینسر لاحق ہونا

طویل مدت سے گیس کا رہنا اور معدے پر سوزش ہونا

تمباکو نوشی

معدے کے کینسر کی علامات

بیماری کے آغاز میں چند شکایات جو سامنے آتی ہیں ان کا انحصار معدے میں موجود ٹیومر کے مقام پر ہوتا ہے- تاہم، کچھ علامات ہیں جو معدے کے کینسر کی طرف اشارہ کرتی ہیں۔ جیسے کہ

چکر آنا اور تھکاوٹ

خون کی کمی

سیاہ رنگ کا فضلہ

بہت کم بھوک اور کچھ کھانے سے اکتاہٹ

کھانے کے بعد طویل عرصے تک بھرا محسوس کرنا یا یہ محسوس کرنا کہ کھانا نیچے نہیں جائے گا

متلی

قے اور بعض اوقات اس میں خون کا بھی آنا

سینے کی جلن

اچانک وزن میں کمی وہ بھی بغیر خوراک میں کسی تبدیلی اور ورزش کے

معدے کا کینسر، ان علامات کو نظر انداز نہ کریں ورنہ نقصان ہوسکتا ہے 2

ڈاکٹر سے رابطہ

کیا آپ اوپر کی فہرست میں سے ایک یا زیادہ علامات کو پہچانتے ہیں؟ زیادہ پریشان نہ ہوں، کیونکہ معدے کا کینسر ایک نایاب بیماری ہے۔ معدے کی شکایات دوسری وجوہات کی حامل بھی ہوسکتی ہیں اور عام طور پر تناؤ کا نتیجہ بھی ہوتی ہیں۔ اگر شکایات کئی ہفتوں تک جاری رہتی ہیں تو، ڈاکٹر سے ضرور رابطہ کریں-

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں